حضرت زينب (س) عالمه غير معلمه بيں



قال علي ابن الحسين عليهما السلام: « انت بحمد الله عالمة غير معلمة فهمة غير مفهمة[1]

   امام زين العابدين عليہ السلام فرماتے هيں کہ بحمد اللہ ميري پھوپھي (زينب سلام عليہا) عالمہ غيرمعلمہ هيں اور ايسي دانا کہ آپ کو کسي نے پڑھايا نهيں هے.

    زينب سلام عليہا کي حشمت و عظمت کے لئے يهي کافي تھا کہ انھيں خالق حکيم نے علم لدني ودانش وہبي سے سرفراز فرمايا تھا اور عزيزان گرامي آج کي مجلس کا عنوان هے ”زينب کربلا سے شام تک “ زينب ايک فردنهيں بلکہ اپنے مقدس وجود ميں ايک عظيم کائنات سميٹے هوئے هيں ايک ايسي عظيم کائنات جس ميں عقل و شعور کي شمعيں اپني مقدس کرنوں سے کاشانہ انسانيت کے دروبام کو روشن کئے هوئے هيں اور جس کے مينار عظمت پر کردار سازي کا پر چم لہراتا هوا نظر آتا هے زينب کے مقدس وجود ميں دنيائے بشريت کي تمام عظمتيں اور پاکيز ہ رفعتيں سمٹ کر اپنے آثار نماياں کرتي هوئي نظر آتي هيں زينب کا دوسري عام خواتينوں پر قياس کرنا يقينا ناانصافي هے کيونکہ امتياز وانفردي حيثيت اور تشخص هي کے سائے ميں ان کي قدآور شخصيت کے بنيادي خدو خال نماياں هو سکتے هيں اور يہ کہنا قطعاً مبالغہ نهيں کہ زينب ايک هوتے هوئے بھي کئي ايک تھيں زينب نے کربلا کي سرزمين پر کسب کمال ميں وہ مقام  حاصل کيا جس کي سرحديں دائرہ امکان ميںآنے والے ہر کمال سے آگے نکل گئيں اورزينب کي شخصيت تاريخ بشريت کي کردار ساز ہستيوں ميں ايک عظيم و منفرد مثال بن گئي ہم فضيلتوں کمالات اور امتيازي خصوصيات کي دنيا پر نظر ڈالتے هيں تو زينب کي نظير ہميں کهيں نظر نهيں آتي اور اس کي وجہ يهي هے کہ زينب جيساکہ ميں نے بيان کيا هے کہ اپنے وجود ميں ايک عظيم کائنات سميٹے هوئے جس کي مثال عام خواتين ميں نهيں مل سکتي هے اور يہ بات يہ ايک مسلم حقيقت بن چکي هے کہ انساني صفات کو جس زاويے پر پرکھا جائے زينب کا نام اپني امتيازي خصوصيت کے ساتھ سامنے آتا هے جس ميں وجود انساني کے ممکنہ پہلوؤں کي خوبصورت تصوير اپني معنوي قدروں کے ساتھ نماياںدکھا ئي ديتي هے۔

جناب زينب ان تمام صفات کے ساتھ ساتھ فصاحت و بلاغت کي عظيم دولت و نعمت سے بھي بہر مند تھي زينب بنت علي تاريخ اسلام کے مثبت اور انقلاب آفريں کردار کا دوسرا نام هے صنف نازک کي فطري ذمہ داريوں کو پورا کرنے اور بني نوع آدم عليہ السلام کو حقيقت کي پاکيز ہ راہ دکھانے ميں جہاں مريم و آسيہ وہاجرہ و خديجہ اور طيب وطاہر صديقہ طاہر ہ فاطمہ زہرا سلام اللہ عليہم کي عبقري شخصيت اپنے مقدس کردار کي روشني ميں ہميشہ جبين تاريخ کي زينت بن کر نمونہ عمل ثابت هوئي هيں وہاں زينب بھي اپنے عظيم باپ کي زينت بنکر انقلاب کربلا کا پرچم اٹھائے هوئے آواز حق و باطل سچ و جھوٹ ايمان و کفر اور عدل وظلم کے درميان حد فاصل کے طور پر پہچاني جاتي هيں زينب نے اپنے عظيم کردار سے آمريت کو بے نقاب کيا ظلم و استبداد کي قلعي کھول دي دنيا کے زوال پزير حسن وجمال پر قربان هونے والوں کو آخرت کي ابديت نواز حقيقت کا پاکيزہ چہرہ ديکھا يا صبرو استقامت کا کوہ گراں بنکر علي عليہ السلام کي بيٹي نے ايسا کردار پيش کيا جس سے ارباب ظلم و جود کو شرمندگي اور ندامت کے سوا کچھ نہ مل سکا زينب کو علي و فاطمہ عليہما السلام کے معصوم کردار ورثے ميں ملے اما م حسن عليہ السلام کا حسن وتدبير جہاں زينب کے احساس عظمت کي بنياد بنا وہاں امام حسين عليہ السلام کا عزم واستقلال علي عليہ السلام کي بيٹي کے صبر و استقامت کي روح بن گيا ، تاريخ اسلام ميں زينب نے ايک منفرد مقام پايا اور ايساعظيم کارنامہ سرانجام ديا جو رہتي دنياتک دنيائے انسانيت کے لئے مشعل راہ واسوہ حسنہ بن گيا۔

زينب بنت علي(ع)تاريخ اسلام ميں اپني مخصوص انفراديت کي حامل هے اور واقعہ کربلا ميں آپ کے صبر شجاعانہ جہاد نے امام حسين عليہ السلام کے مقدس مشن کو تکميل يقيني بنايا آپ نے دين اسلام کي پاکيزہ تعليمات کا تحفظ وپاسداري ميں اپناکردار اس طرح ادا کيا کہ جيسے ابوطالب(ع)رسول اللہ (ص)کي پرورش ميں اپنے بھتيجے کے تحفظ کے لئے اپني اولاد کو نچھا ور کرنا پسند کرتے تھے کيونکہ ايک هي ہدف تھا کہ محمد بچ جائے وارث اسلام بچ جائے بالکل اسي طرح زينب کاحال هے کہ اسلام بچ جائے دين بچ جائے چاهے کوئي بھي قرباني ديني پڑے اسي لئے تاريخ ميں زينب کي قرباني کي مثال نهيں ملتي يہ شجاع کي بيٹي هے جس کي شجاعت کا لوہا بڑے بڑوں نے مانا تھا اس شجاعت کے پيکر کي ولادت باسعادت کے موقع پر جب اسم مبارک کي بات آئي تو تاريخ گواہ هے کہ سيدہ زينب کي ولادت ہجرت کے پانچويں سال ميں جمادي الا وليٰ کي پانچ تاريخ کو هوئي اور آپ اپنے بھائي حسين عليہ السلام کے ايک سال بعد متولد هوئيں جس وقت فاطمہ زہرا سلام اللہ عليہا اس گوہر ناياب کو اپنے ہاتھوں پر اٹھائے هوئے دل کے اندر اس کي آنے والي زندگي کے چمن کو سجائے رسول اللہ (ص)کي خدمت ميں حاضر هوئيں اورعرض کي کہ اے بابا اس بچي کا نام تجويز فرمائيں ،روايت کي گئي کہ جس وقت جناب زينب بنت علي ابن ابيطالب عليہم السلام کي ولادت با سعادت هو ئي تو رسول اللہ(ص)کو ولادت کي خبر دي گئي آپ بہ نفس نفيس فاطمہ الزہرا عليہا السلام کے گھر تشريف لائے اور فاطمہ زہرا سے فرمايا اے ميري بيٹي ،اپني تازہ مولودہ بچي کو مجھے دو پس جب کہ شہزادي نے زينب بنت علي عليہمالسلام کو رسول اکرم (ص)کے سامنے پيش کيا تو رسول اللہ (ص)نے زينب کو اپني آغوش ميں ليکر بحکم خدااس بچي کانام زينب رکھا اس لئے کہ زينب کے معني هيں باپ کي زينت جس طرح عربي زبان ميں ”زين “معني زينت اور ”اب“معني باپ کے هيں يعني باپ کي زينت هيں ،اپنے سينہ ٴ اقدس سے لگاليا اور اپنا رخسار مبارک زينب بنت علي(ع) کے رخسار مبارک پر رکھ کر بلند آواز سے اتنا گريہ کيا کہ آپ کے آنسوں آپ کي ريش مبارک پر جاري هوگئے فاطمہ زہرا نے فرمايا اے بابا جان آپ کے رونے کا کيا سبب هے اے بابا آپ کي دونوں آنکھوں کو اللہ نے رلايا نهيں هے ؟تو رسول اللہ (ص) نے فرمايا اے ميري بيٹي فاطمہ آگاہ هو جاؤ کہ يہ بچي تمہارے اور ميرے بعدبلاؤں ميں مبتلاهوگي اور اس پر طرح طرح کے مصائب پڑيں گے پس يہ سن کر فاطمہ زہرا سلام اللہ عليہانے بھي گريہ کيا اور پھر فرمايا اے بابا جان جو شخص ميري اس بيٹي اور اس کے مصائب پر بکاکرے گا تو اس کو کيا ثواب ملے گا ؟ تورسول اللہ نے فرمايا اے ميرے جگر کے ٹکڑے اور اے ميري آنکھوں کي ٹھنڈک ، جو شخص زينب کے مصائب پر گريہ کنا هوگا تو اس کے گريہ کا ثواب اس شخص کے ثواب کے مانند هوگا جو زينب کے دونوں بھائيوں پر گريہ کرنے کا هے۔ ۔[2]

 زينب اس باعظمت خاتون کانام هے جن کا طفوليت فضيلتوں کے ايسے پاکيزہ ماحول ميں گذرا هے جو اپني تمام جہتوں سے کمالات ميں گھرا هوا تھا جس کي طفوليت پر نبوت و امامت کاسايہ ہر وقت موجود تھا اور اس پر ہر سمت نوراني اقدار محيط تھيں رسول اسلام (ص)نے انھيں اپني روحاني عنايتوں سے نوازا اور اپنے اخلاق کريمہ سے زينب کي فکري تربيت کي بنياديں مضبوط و مستحکم کيں نبوت کے بعد امامت کے وارث مولائے کائنات نے انھيں علم و حکمت کي غذا سے سير کيا عصمت کبريٰ فاطمہ زہرا نے انھيں فضيلتوں اور کمالات کي ايسي گھٹي پلائي جس سے زينب کي تطهير و تزکيہ نفس کا سامان فراہم هوگيا اسي کے ساتھ ساتھ حسنين شريفين نے انھيں بچپن هي سے اپني شفقت آميز مرافقت کا شرف بخشا يہ تھي زينب کے پاکيزہ تربيت کي وہ پختا بنياديں جن سے اس مخدومہ اعليٰ کا عہد طفوليت تکامل انساني کي ايک مثال بن گيا.  [3]

 وہ زينب جو قرة عين المرتضيٰ جو علي مرتضيٰ کي آنکھوں کي ٹھنڈک هو جو علي مرتضيٰ کي آنکھوں کانور هو وہ زينب جو علي مرتضيٰ کي قربانيوں کو منزل تکميل تک پہنچانے والي هو وہ زينب جو”عقيلة القريش“هو جو قريش کي عقيلہ و فاضلہ هو وہ زينب جو امين اللہ هو اللہ کي امانتدار هو گھر لٹ جائے سر سے چادر چھن جائے بے گھر هو جائے ليکن اللہ کي امانت اسلام پر حرف نہ آئے، قرآن پر حرف نہ آئے،انسانيت بچ جائے، خدا کي تسبيح و تہليل کي امانتداري ميں خيانتداري نہ پيدا هو، وہ هے زينب جو ”آية من آيات اللہ“آيات خدا ميں ہم اہلبيت خدا هيں ہم اللہ کي نشانيوں ميں سے ہم اللہ کي ايک نشاني هيں وہ زينب جومظلومہ وحيدہ بے مثل مظلومہ جس کي وضاحت آپ کے مصائب ميں هوگي جو مظلوموں ميں سے ايک مظلومہ ”مليکة الدنيا“وہ زينب جو جہان کي ملکہ هے جو ہماري عبادتوں کي ضامن هے جو ہماري زينب اس بلند پائے کي بي بي کا نام جس کا احترام وہ کرتا جس کا احترام انبياء ما سبق نے کيا هے جس کو جبرائيل نے لورياں سنائي هيں کيو نکہ يہ بي بي زينب ثاني زہرا سلام اللہ عليہا هے اور زہرا کا حترام وہ کرتا تھا جس کا احترام ايک لاکھ چو بيس ہزار انبياء کرتے تھے ميں جملہ حوالہ کررہا هو ں اگر بيدار هو کر آپ نے غور کيا تو بہت محظوظ هو نگے جس رحمة للعالمين کے احترام ميں ايک لاکھ انبياء کھڑے هوتے هو ئے نظر آئے عيسيٰ نے انجيل ميں نام محمد ديکھا احترام رحمة للعالمين ميں کھڑے هوگئے موسيٰ نے توريت ميں ديکھا ايک بار اس نبي کے اوپر درود پڑھنے لگے تو مددکے لئے پکارا احترام محمد ميں سفينہ ساحل پہ جا کے کھڑاهوگيا (يعني رک گيا )عزيزوں غور نهيں کيا جس رحمت للعالمين کے احترام ميں ايک کم ايک لا کھ چوبيس ہزار انبيا ء کا، کارواں کھڑا هو جائے تووہ رحمت للعالمين بھي تو کسي کے احترا م ميں کھڑا هوتا هو گا اب تاريخ بتاتي هے کہ جب بھي فاطمہ سلام اللہ عليہا محمد (ص) کے پاس آئيں محمد کھڑے هو گئے تو اب مجھے کہنے ديجيئے کہ يہ کيسے هو سکتا هے کہ استاد کھڑا هو اور شاگرد بيٹھا رهے سردار کھڑا هو سپاهي بيٹھے رهيں تو اب بات واضح هو گئي کہ محمد(ص)اکيلے نهيں فاطمہ کے احترام ميں کھڑے هوئے بلکہ يوں کہہ دوں ايک لاکھ چوبيس ہزار انبياء کا کارواں احترام فاطمة الزہرا سلام اللہ عليہاميں کھڑا هوااب زينب هيں ثاني زہرا اگران کے تابوت و ان کے حرم کے سامنے احترام ميں اگر شيعہ کھڑا هو جائے تو سمجھ لنيا کہ وہ سنت پيغمبر ادا کررہا هے ۔

 کائنات کي سب سے محکم و مقدس شخصيتوں کے درميان پرورش پانے والي خاتون کتني محکم و مقدس هوگي اس کا علم و تقويٰ کتنا بلندو بالا هوگا يهي وجہ هے کہ روايت کے جملہ هيںکہ آپ عالمہ غير معلمہ هيں آپ جب تک مدينہ ںميں رهيں آپ کے علم کا چر چہ هو تا رہا اور جب آپ مدينہ سے کوفہ تشريف لائيںتو کوفہ کي عورتوں نے اپنے اپنے شوہروں سے کہا کہ تم علي سے درخواست کرو کہ آپ مردوں کي تعليم و تربيت کے لئے کافي هيں ليکن ہماري عو رتوں نے يہ خواہش ظاہر کي هے کہ اگر هو سکے تو آپ اپني بيٹي زينب سے کہہ ديں کہ ہم لوگ جاہل نہ رہ سکيں ايک روز کوفہ کي اہل ايمان خواتين رسول زادي کي خدمت ميں جمع هو گئيںاور ان سے درخواست کي کہ انھيں معارف الٰهيہ سے مستفيض فرمائيں زينب نے مستورات کوفہ کے لئے درس تفسير قرآن شروع کيا اور چند دنوں ميں هي خواتين کي کثير تعداد علوم الٰهي سے فيضياب هونے لگي آپ روز بہ روز قرآن مجيد کي تفسير بيان کر تي تھيںاور روزبہ روز تفسير قرآن کے درس ميں خواتين کي تعداد ميں کثرت هو رهي تھي درس تفسير قرآن عروج پر پہنچ رہا تھااور ساتھ هي کوفہ ميں آپ کے علم کا چرچہ روز بروز ہر مردو زن کي زبان پر تھااور ہر گھر ميں آپ کے علم کي تعريفيں هو رهي تھيں اور لوگ علي(ع) کي خدمت ميں حاضر هو کر آپ کي بيٹي کے علم کي تعريفيں کيا کرتے تھے يہ اس کي بيٹي کي تعريفيں هو رهي هے جس کا باپ ”راسخون في العلم “ جس کا باپ باب شہر علم هے جس کا باپ استاد ملائکہ هے ۔

[1] (خصائص زينبيہ ص ۷۹ وزينب زينب ہے سفينةالبحار جلد ۱ص۵۵۸)
[2]  خصائص زينبيہ :ص۵۲زينب زينب ہے۷۳
[3]صحيفہ وفا :ص۱۱۳