انسانى کردار کى بلندى



انسان کى بلندى عقل و تدبر کے استعمال اور فرض شناسى ميں ھے اس صفت کے کمال اور نقص سے اس کى بلندى اور پستى کے حدود متعين ھوتے ھيں يھى وہ تقويٰ ھے جسے قرآن نے معيارِ فضليت بشرى قرار ديا ھےـ  ان اکرمکم عنداللّٰہ اتقاکم (يعني) ”تم ميں زيادہ صاحب عزت وہ ھے جو سب سے زيادہ پرھيزگار ھوـ

فرائض ھميشہ ايک ھى شکل و صورت پر نھيں ھوتے کوئى بڑے سے بڑا حکيم و دانشمند فرائض کى کوئى ايسى فھرست نھيں مرتب کرسکتا جو ھر شخص کے لئے ھر حال ميں قابل ادائى ھوـ  سچ بولنے ھى کو ليجئےـ  يہ بے شک انسانى فرض ھے مگر کيا ھر موقع پر؟  مثال کے طور پر کوئى ظالم شمشير بکف کسى مظلوم کے تعاقب ميں ھو،  وہ اس کى نظر بچا کر ھمارى آنکھوں کے سامنے کھيں مخفى ھو جائےـ  اب وہ ظالم ھم سے پوچھے کہ کيا تم نے ديکھا ھے وہ کس طرف گيا ھے؟  اب کيا ھميں سچ بولنا چاھئے؟  يقيناً اگر ھم نے سچ سچ کھہ ديا تو ظالم کى تلوار ھو گى اور مظلوم کا گلا ھو گا،  اور اس خونِ ناحق کى ذمہ دارى ھمارے سچ پر ھو گيـ

متعدد گناھان کبيرہ ھيں جو سچ سچ کھنے ھى سے وقوع ميں آتے ھيں مثلاً نمامى يعنى لگائى بجھائى کرناـ  چغلى کھاناـ  يہ سچ ھى ھوتا ھے جھوٹ نھيں  ھوتا  مگر  وہ  بھت  بڑا  گناہ  ھےـ  اسي  طرح  غيبت  گناہ کبيرہ  ھےـ  وہ  بھي  سچ  ھي  کھنے  سے ھوتى ھے معلوم ھوا کہ ھر صورت ميں سچ کھنا فريضھٴ انسانى نھيں ھےـ

اسى طرح امانت واپس کرناـ  ضرور انسانى فريضہ ھے مگر اسى صورت ميں کہ جب کوئى ظالم مظلوم کے قتل کا ارادہ رکھتا ھو اگر اس نے اپنى تلوار  اتفاق  سے  ھمارے  پاس بطور امانت  رکھوائي  ھوـ  اب  اس  وقت  وہ  اپني  تلوار  ھم  سے  مانگے  تو  ھرگز  ھم  کو  نہ  دينا  چاھئے  ورنہ ھم شريکِ قتل ھوں گےـ

مذھبى حيثيت سے عبادات ميں سب سے اھم نماز ھے ليکن اگر کوئى ڈوبتا رھا ھو او راس کا بچانا نماز توڑنے پر موقوف ھو تو نماز کاتوڑ دينا واجب ھو گاـ  اگر وہ ڈوب گيا اور نماز پڑھتے رھے تو يہ نماز بارگاہ الٰھى سے مسترد ھو جائے گيـ  کہ ميرا بندہ ڈوب گيا اور تم نماز پڑھتے رھے مجھے ايسى نماز نھيں چاھئےـ  معلوم ھوا کہ فرائض اور عبادات باعتبارحالات و واقعات بدلتے رھتے ھيںـ  فرائض کى يھى نگھداشت جوھرِ انسانيت ھےـ